خلفاء راشدین کے طریقہ کی پیروی

————————————–

عبداللہ بن احمد بن بشیر بن ذکوان دمشقی، ولید بن مسلم، عبداللہ بن علاء حضرت عرباض بن ساریہ فرماتے ہیں کہ

ایک دن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہمارے درمیان کھڑے ہوئے

ایسا جامع وعظ کیا کہ دل کانپ اٹھے

اور آنکھوں سے آنسو بہہ نکلے،

عرض کیا گیا یا رسول اللہ آپ نے ہمیں ایسی نصیحت فرمائی ہے

جس طرح رخصت کرنے والا نصیحت کرتا ہے

آپ ہم سے کوئی عہد لے لیں ،

انہوں نے فرمایا ، اللہ کے ڈر کو مظبوطی سے پکڑو

امیر کا حکم سننا اور ماننا لازم کرلو

اگرچہ وہ حبشی غلام ہو۔

عنقریب تم میرے بعد سخت اختلافات دیکھو گے،

پس تم میری اور میرے ہدایت یافتہ خلفاء کی سنت کو لازم پکڑ لینا

ان کے طریقہ کو دانتوں سے پکڑ لینا

بدعات سے اپنے آپ کو بچانا کیونکہ ہر بدعت گمراہی ہے۔

—————————————

Yahya bin Abu Mutâ’ said: “I heard ‘Irbâd bin Sâriyah say:

‘One day, the Messenger of Allah (s.a.w.w) stood up among us

and delivered a deeply moving speech to us

that melted our hearts and caused our eyes to overflow

with tears. It was said to him: ‘0 Messenger of Allah,

you have delivered a speech of farewell,

so enjoin sometlthg upon us.’ He said:

‘I urge you to fear Allah, and to listen and obey,

even if (your leader) is an Abyssinian slave.

After I am gone, you will see great conflict.

I urge you to adhere to my Sunnah and the path of the Rightly-Guided Caliphs,

and cling stubbornly to it.

And beware of newly-invented matters, for even, innovation is a going astray.”

(Hasan)

—————————————-
سنن ابن ماجہ:جلد اول:حدیث نمبر 42

حدیث متواتر حدیث مرفوع مکررات 6

VN:F [1.9.22_1171]
Rating: 0.0/5 (0 votes cast)