اک محنت کش کی جاب گئی ھے
سرمایہ سرکار ہوا ھے
بچوں سے تعلیم چھِنی ھے
گھر مندر شمشان ہوا ھے
فاقہ پھر تقدیر ھے ٹھہری
جیون پھر آزار ہوا ھے
اک محنت کش کی جاب گئی ھے

بھوک نے ڈیرہ ڈال لیا ھے
آنگن آس کی لاش پڑی ھے
زیست یہاں دم توڑ رہی ھے
انساں ھے کہ بلک رہا ھے
انسانیت سسک رہی ھے
ہنڈیا میں کچھ کھَول رہا ھے
بچہ ماں سے بول رہا ھے
“امی مجھ کو بھوک لگی ھے”

ٹی وی پہ اعلان ہوا ھے
خوشحالی کی تان چلی ھے
کھلیانوں کا مان ھے ٹوٹا
سمندر بُرد اناج ہوا ھے
خشک کئی پستان ہوئے ہیں
ممتا ارماں باج ہوا ھے
ہتھیاروں کی ڈیل ہوئی ھے
جنگ کا پھر سامان ہوا ھے
ٹی وی پہ اعلان ہوا ھے… ۔

VN:F [1.9.22_1171]
Rating: 0.0/5 (0 votes cast)