مُجھے موت دے کہ حیات دے
مِرے بے ہُنر مِرا سات دے

مِری پیاس صدیوں کی پیاس ہے
مِرے کربلا کو فرات دے

مِرے رتجگوں کے حساب میں
کوئی ایک نیند کی رات دے

کوئی ایسا اسمِ عظیم ہو
مُجھے تیرے دُکھ سے نجات دے

یہ جو تِیرگی ہے غُرور میں
کوئی روشنی اِسے مات دے

مِری شاعری کے نصیب میں
کوئی ایک حرفِ ثبات دے

VN:F [1.9.22_1171]
Rating: 0.0/5 (0 votes cast)