کھنچئے مت، کمان کو بہتر
بند رکھئے،زبان کو بہتر۔۔۔۔
ہل رہی ہون جہاں کی بنیادیں
چھوڑنا اس مکان کو بہتر۔۔۔۔۔
رکھئےمحفوظ کہ امانت ہے
اپنی اس نقد جان کو بہتر۔۔۔۔۔
بس ملمّع اترنے سے پہلے۔۔۔
چھوڑئےجھوٹی شان کوبہتر
بیشتر کہ گرفت میں آئیں۔۔۔۔۔
ہم بڑھالیں دکان کو بہتر۔۔۔۔۔۔
لائےجوزندگی میں کڑواہٹ
تھوکنا ایسی آن کو بہتر۔۔۔۔۔۔۔۔
شعر فہمی رضیّہ عنقا ہے۔۔۔
بند کیجئے بیان کو بہتر۔۔۔۔۔

VN:F [1.9.22_1171]
Rating: 0.0/5 (0 votes cast)