ھر شے کا سودا ھوتا ھے
ھر چیز بکاؤ ھوتی ھے۔۔۔۔۔۔
ھر فرد یہاں پر تاجر ھے،
ھر وقت تجارت ھوتی ھے۔
تم آپ ھی اپنے دام کہو!
چھپ کے نہی سرے عام کہو!
کیا لو گے اپنی یاری کا؟
کیا لو گے تم دیلداری کا؟
غم خوار بنو گے کتنے میں؟
تم پیار کرو گے کتنے میں؟
سب جذبے میرے نام کرو،
ھم نام تم اپنا دام کہو
پر دام چکانے کی خاطر،
ھم اپنا دفتر کھولیں تو،
ھم اپنی جیب ٹٹولیں تو
بس پیار ملے گا تھوڑا سا،
آزار ملے گا تھوڑا سا
یہ سکے یہاں کب چلتے ھیں،
کیا اُدھار ملے گا تھوڑا سا؟
یہ دنیا بے اعتباری کی،
یہ عرض ھے ھر بیوپاری کی۔۔۔۔۔
ھرشے کا سودا ھوتا ھے!!
ھر شے بکاؤ ھوتی ھے۔

VN:F [1.9.22_1171]
Rating: 3.7/5 (3 votes cast)
ھر شے کا سودا ھوتا ھے, 3.7 out of 5 based on 3 ratings