دارِ شوکت سبھی، پابجولاں چلو
کوئے رحمت چلو، سوئے درماں چلو
لے کے زندان سے، شمعِ حرمت چلو
سر پہ باندھے کفن، تہی داماں چلو
فکری سرحد پہ یلغارِ غیراں سہی
سائے اقدار کے، بن کے درباں چلو
ہم نے مانا کہ شب ھے اندھیری بہت
قافلے فکر کے، تھامے قرآں چلو
جذبہ حریت کے خزینے چلو
زخمی روحوں کے پندار سینے چلو

حسِ محرومی و شوقِ ارماں چلو
جذبہ آتشی، لے کے ساماں چلو
علمِ عشاقِ آشیانہ چلو
لینے جاہ و حشم جاودانہ چلو
رب کے دربار میں اشک بو لے چلو
مانندِ بدر کے ، معجزانہ چلو
کندھا مظلام سے تم ملائے رکھو
بن کے ظالم پہ تم تازیانہ چلو
چھوڑ سر خوشی و سہل جادہ چلو
برقِ مومن بنو، خاک زادہ چلو

بُتِ فسطائیت کو گرانے چلو
ظلمتِ ازمنہ کو مٹانے چلو
منبرِ قوم پہ، بیٹھے غدار ہیں
ایسے رہبر لگانے ٹھکانے چلو
قرضِ مٹی ھے جو، وہ چکانے چلو
آج جینے کو مرنے بہانے چلو
تہمتِ زندگی، خوں سے دھونے چلو
فصلِ ابدی کوئی، آج بونے چلو
خوابِ غفلت سے جاگو، سفر کو چلو
سب ہی اپنے تئیں، آؤ گھر کو چلو

VN:F [1.9.22_1171]
Rating: 0.0/5 (0 votes cast)