اسے کہنا کہیں گھر بن گیا ہے
کسی دیوار میں در بن گیا ہے
بدن پر تُہمتوں کی بارشیں ہیں
ہمیں تو عشق محشر بن گیا ہے
تُمہارے لب پہ اک حرفِ تسّلی
ہمارے دل پہ نشتر بن گیا ہے
کمالِ وردِ اسمِ آگہی ھے
کہ قطرہ بھی سمندر بن گیا ہے
زمیں پر چاندنی کا رقصِ مستی
یہ کیسا شب کا منظر بن گیا ہے

usay kehna kahin ghar ban gya hai
kisi deewar mein dar ban gya hai
badan pr tohmaton ki baarishein hain
hamein to ishq mehshar ban gya hai
tumhare lab pr ik harf-e-tassali
hamare DiL pe nashtr ban gya hai
kamal-e-ward-e-ismay aagahi hai
k qatra b samundr ban gya hai
zameen pr chandni ka raqs masti
ye kesa shab ka manzr ban gya hai

VN:F [1.9.22_1171]
Rating: 0.0/5 (0 votes cast)